امیر محفل میرے ساتھیو! السلامُ علیکم!
آج کی میری تقریر کا عنوان محسن انسانیت محمد ﷺ ہیں۔ میں اپنے ادنیٰ و حقیر الفاظ میں تقریر شروع کرتا ہوں سب لوگ درود شریف پڑھ لیں۔

حضور اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سب کے لئے ایک رول ماڈل ہیں۔ آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی زندگی اس دنیا کے ہر فرد کے لئے ایک رول ماڈل ہے جو اللہ اور قیامت کے دن پر یقین رکھتا ہے۔ آپ ﷺ کی تمام زندگی ہم سب کے لئے مکمل ضابطہ حیات ہے۔ دنیا نے بہت سارے علماء ، فلسفیوں اور مبلغین کو دیکھا ہے لیکن کوئی بھی حضرت محمد ﷺ جتنا عظیم نہیں تھا۔

اللہ نے انسانیت کی رہنمائی کے لئے تاریخ کے ہر دور میں اپنے رسول بھیجے۔ دنیا صدیوں سے آخری نبی کی منتظر تھی۔ اس طویل انتظار کا اختتام آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ہوا۔ وہ اللہ تعالٰی کے آخری نبی کے طور پر بھیجے گئے تھے۔ ان کی شریعت کو اللہ کا آخری پیغام سمجھا اور پچھلی شریعت کو ختم کردیا گیا تھا۔ ان کی رہنمائی اس دنیا کے خاتمے تک سب کے لئے کافی قرار دی گئی تھی۔ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا ،
"اگر حضرت موسیٰ علیہ السلام زندہ ہوتے تو ان کے پاس میرے پیچھے چلنے کے سوا کوئی چارہ نہیں تھا۔”

جناب صدر!
حضرت محمّدﷺ ماہ ربیع الاول میں پیدا ہوئے اور ماہ ربیع الاول کے مہینے میں ہی دنیا سے اوجھل ہوئے۔ وہ ساری انسانیت کے لئے رحمت کے مجسم ہیں۔ تمام انبیاء نے انسانوں کی رہنمائی کی لیکن محمد ﷺ لوگوں کی زندگیوں میں ایک انقلاب لائے۔ یہ انقلاب بنی نوع انسان کی تاریخ میں مثال کے طور پر کم ہے۔ پیغمبر اکرم ﷺ سے ہماری محبت میں نہ صرف ان کے لئے عقیدت اور جذبہ شامل ہے بلکہ ان کے اعمال پر عمل کرنا بھی شامل ہے۔

ہمارے پاس ان کی تعلیمات پر عمل کرنے کے سوا کوئی چارہ نہیں بچا ہے۔ قرآن اور سنت ہمارے دین کی اساس ہیں۔ نبی اکرم ﷺ کا مقدس طرزِ زندگی ہماری انفرادی اور اجتماعی زندگی میں ہماری رہنمائی کرتا ہے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ مسلمانوں کو دوسروں کے ساتھ اچھا سلوک کرنا چاہئے۔

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ حج الوداع کے موقع پر آپ نے فرمایا ،
"میں آپ کے درمیان دو چیزیں چھوڑ رہا ہوں۔ آپ کبھی بھی سیدھے راستے سے انحراف نہیں کریں گے۔ یہ قرآن مجید اور میری سنت ہیں۔ یہ دونوں چیزیں الگ نہیں ہوں گی۔” اگر ہم قرآن و سنت پر عمل کریں گے تو ہم سیدھے راستے سے ہٹ نہیں سکتے ہیں۔

ساتھیو!
جب آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم نے بنی نوع انسان کی بہتری کے لئے اپنا مشن شروع کیا تو لوگ ان کے تلخ دشمن بن گئے۔ انہوں نے آپﷺکو اور آپ ﷺکے اصحاب کو شدید اذیت دی۔ آپ ﷺ نے تمام مشکلات کو انسانیت سے برداشت کیا اور اپنی جدوجہد جاری رکھی۔ آخر کار ، آپ ﷺ کامیاب ہوگئے۔ مسلمانوں نے بری افواج پر غلبہ حاصل کیا اور پورے عرب کو فتح کرلیا۔ ہمیں ان منفی قوتوں کو شکست دینے کے لئے قرآن و سنت پر عمل کرنا ہے۔ قرآن مجید اسلام کی بنیاد ہے اور سنت نے اس عمارت کو ایک شکل دی ہے۔ مختصر یہ کہ امت مسلمہ کے لئے قرآن وسنت پر عمل کرنا اور آقاﷺ کی تعلیمات پر زندگی گزار کر اسلام کا کھویا ہوا مقام دوبارہ حاصل کرنا ہے۔
اسی کے ساتھ اجازت چاہوں گا۔
فی امان اللہ
شکریہ

Advertisements